کے الیکٹرک نے شہرِ قائد میں بدترین لوڈ شیڈنگ کرنے کا پلان بنا لیا

کے الیکٹرک نے شہرِ قائد میں بدترین لوڈ شیڈنگ کرنے کا پلان بنا لیا ہے۔

 تفصیلات کے مطابق پہلی بار رہائشی علاقوں کے ساتھ صنعتوں کو بھی گھنٹوں کی لوڈ شیڈنگ برادشت کرنی پڑے گی، کے الیکٹرک ذرائع کا کہنا ہے کہ حکومت کی جانب سے ٹیرف ڈیفرنشنل کلیم کی مد میں اربوں روپے لینے ہیں۔

 کے الیکٹرک نے وفاقی حکومت سے ادائیگیوں حوالے سے سندھ صوبائی حکومت سے بھی مدد کی درخواست دی، کے الیکٹرک نے وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کو مکتوب ارسال کردیا۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ شہر میں اس وقت 12 گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ ہو رہی ہے جس میں 5 گھنٹے مزید اضافہ ہوسکتا ہے، شہر میں لوڈ شیڈنگ بڑھنے سے صنعتی اور معاشی سرگرمیاں متاثر ہوں گی اور امن و امان کے مسائل پیدا ہو سکتے ہیں۔

ذرائع کے مطابق کے الیکٹرک کو 25 ارب روپے ٹیرف ڈیفرنشنل وصول کرنا ہے، کے الیکٹرک نے اس حوالے سے وفاقی وزارت توانائی کو بھی مکتوب ارسال کیئے ہیں، ٹیرف ڈیفرنشل کی رقم فوری ادا نہ کی گئی تو پی ایس او اور سوئی سدرن کو ادائیگیاں کرنا مشکل ہوجائے گا۔

Advertisement

ذرائع کا کہنا ہے کہ ٹیرف ڈیفرنشل کلیم 3 روپے فی کلواٹ سے بڑھ کر 12 روپے تک پہنچ گیا ہے،سوئی سدرن کو ادائیگی نہ کی گئی تو وہ گیس سپلائی بند کر سکتا ہے، جس سے مزید 500 میگاواٹ بجلی کی قلت ہوجائے گی، رہائشی علاقے ہوں یا صنعتی علاقے سب میں لوڈ شیڈنگ ہوگی۔

کے الیکٹرک ذرائع کے مطابق سوئی سدرن عدالتی فیصلے کے منافی مقامی گیس کے بجائے آر ایل این جی فراہم کررہی ہے، آر ایل این جی مقامی گیس کے مقابلے 5 گنا مہنگی ہے جس سے صارفین پر مالی بوجھ میں اضافہ ہوگا۔

اپنی رائے کا اظہار کریں