– بول نیوز سندھ ہائی کورٹ؛ سات سالہ بچی سے زیادتی کیس میں سزا کے خلاف اپیل منظور

سندھ ہائی کورٹ نے سات سالہ بچی سے زیادتی کے کیس میں سزا کے خلاف اپیل منظورکرلی۔

تفصیلات کے مطابق سندھ ہائی کورٹ میں سات سالہ بچی سے زیادتی کے کیس میں عدالت نے ملزم زین العابدین کی سزائے موت بریت میں تبدیل کرتے ہوئے کہا کہ ملزم اگر کسی اور کیس میں ملوث نہیں ہیں تو رہا کیا جائے۔

عدالت نے کیس میں آبزرویشن دی کہ کم سن بچی سے زیادتی ایک سنگین جرم ہے۔ اس طرح کے واقعات معاشرے کے بنیادی ڈھانچے کے خلاف ہیں۔

سندھ ہائی کورٹ نے آبزرویشن دی کہ بحثیت جج ہمیں ایسے تمام پہلوؤں کو ایک طرف رکھنا ہوگا۔ عدالت کو اپنے سامنے موجود شواہد کا غیر جانبداری سے جائزہ لے کر فیصلہ کرنا ہوتا ہے۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ عدالت کو ایسا فیصلہ کرنا ہوتا ہے اس کی تائید ریکارڈ پر موجود شواہد سے ہو سکے۔

Advertisement

وکیل ملزم نے کہا کہ ملزم کو ڈین این اے میچ نہیں ہوا تھا۔ ملزم کے خلاف جھوٹا مقدمہ بنایا گیا ہے۔

مدعی مقدمہ نے کہا کہ مجھے میرے بیٹے فون پر بتایا کہ ہمارے ہمسائے زین العابدین نے میری سات سالہ بچی کے ساتھ زیادتی کی ہے۔

پولیس کے مطابق ملزم کے خلاف سعید آباد تھانے میں مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ ملزم نے بچی کو 14 اکتوبر 2015 کو زیادتی کا نشانہ بنایا تھا۔

ماتحت عدالت نے ملزم کو یکم فروری 2021 کو سزائے موت اور پانچ لاکھ روپے جرمانے کی سزا سنائی تھی۔

Advertisement

اپنی رائے کا اظہار کریں