پاکستان میں جدید اینیمیشن ٹریننگ سینٹر قائم کرنے کا آغاز

پاکستان میں جدید اینیمیشن ٹریننگ کے لیے سینٹر آف ایکسیلینس قائم کرنے کے منصوبے کا آغاز کردیا گیا، منصوبہ پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے تعاون، جامعہ کراچی اور اگنائٹ کے اشتراک سے مکمل کیا جائے گا۔

وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی نے 2 ارب روپے لاگت سے جدید اینیمیشن ٹریننگ کے لیے سینٹر آف ایکسیلینس قائم کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ اگنائٹ تربیت و آلات کے لیے فنڈنگ جبکہ جامعہ کراچی 28 ہزار مربع فٹ جگہ فراہم کرے گی۔

مفاہمتی یادداشت پر دستخط وائس چانسلر جامعہ کراچی پروفیسرخالد عراقی اوراگنائٹ کے چیف ایگزیکٹو عاصم شہریار نے کیے۔ تقریب میں سیکریٹری آئی ٹی ڈاکٹر سہیل راجپوت، سیاسی و سماجی شخصیات، غیر ملکی مندوبین اورشوبز انڈسٹری سے تعلق رکھنے والے معروف فنکاروں نے بھی شرکت کی۔

اس موقع پر وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی امین الحق کا کہنا تھا کہ یہ مرکز پاکستان میں قائم کسی بھی انکوبیشن سینٹر سے بڑا اور سہولیات کے اعتبار سے منفرد ہوگا، 370 ارب ڈالرز کی عالمی اینیمیشن انڈسٹری سے ملک کے لیے ریونیو کی شکل میں بڑا حصہ لیں گے۔

انہوں نے کہا کہ بڑے ریونیو کا حصول اسی وقت ممکن ہے جب نوجوان جدید تربیت اور سہولیات سے آراستہ ہوں۔ میڈیا، انٹرٹینمنٹ، اشتہارات اور گیمنگ سمیت ہر شعبے میں اینیمیشن بنیادی ضرورت بن چکی ہے۔ نوجوانوں میں تخلیقی صلاحیت اور جدت سے خود کو ہم آہنگ کرنے کی قابلیت کسی سے کم نہیں۔

امین الحق کا کہنا تھا کہ کبھی ایسی سہولیات فراہم نہیں کی گئیں کہ بین الاقوامی طور پر نوجوان اپنی صلاحیتوں کو منواسکیں، اینیمیشن و تھری ڈی گرافکس تربیتی مرکز 6 سے 8 ماہ کی ریکارڈ مدت میں کام شروع کردے گا، سفر یہاں نہیں رکے گا بلکہ ملک بھر میں اس طرح کے مراکز کھولے جائیں گے۔

وفاقی وزیر نے پاکستان میں اینیمیشن انڈسٹری کے فروغ کے لیے پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے بھرپور تعاون پر شکریہ بھی ادا کیا، انہوں نے کہا کہ آئی ایس پی آر کی سپورٹ پاکستان اور طلبہ و طالبات کو کامیابی کی راہ پر دیکھنے کے عزم کا اظہار ہے۔

subscribe YT Channel install suchtv android app on google app store
City Tv Pk

اپنی رائے کا اظہار کریں