راھنما اور سیاست دان میں تمیز کرو !تبسم جاوید ملک تحریر : منشاقاضی

Distinguish between leader and politician! Tabassum Javed Malik Written by Mansha Qazi

0 64

راھنما کے تدبر پر قوم بھروسہ کرتی ھے اور اس سے بے غرض عقیدت رکھتی ھے سیاستدان اور راھنما میں یہی فرق ھوتا ھے کہ سیاستدان آنے والے انتخاب کے بارے میں سوچتا ھے اور رھنما آنے والی نسلوں کی اصلوں کی فصلوں کو شاداب وسیراب کرنے کی حکمت عملی پر کام کرتا ھے ۔

 

 

 

 

سیاستدان کے کارکن ابن الوقت اور ذاتی مفادات کے حصول کے لئیے اپنے سیاستدان کو اپنے سامنے دیکھ کر نعرے اور تالیاں بجا کر اسے وقتی طور پر خوش کر دیتے ھیں لیکن رھنما خود بھی اور اس کی قوم بھی مصنوعی اور ذاتی تشہیری حربوں سے دور رھتی ھے اور وہ اپنے راھنما کو آئیڈیل تصور کرتی ھے ان خیالات کا اظہار کویت میں چوالیس 44 سال سے مقیم پاکستان کی نیک نامی کے سفیر وزیراعظم عمران خان کی قیادت کے اسیر تبسم جاوید ملک نے ممتاز صحافی سردار مراد علی خاں کے توسط سے اسلام آباد سے فون پر گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

 

 

 

سمندرپار پاکستانیوں کی بہبود کے ساتھ ساتھ پاکستان تحریک انصاف کے ساتھ بھی انصاف کرنے والے زندہ ء جاوید کارناموں کی بدولت وطن عزیز میں ایک خاص مقام ومرتبہ رکھتے ھیں اور وزیراعظم عمران خان کو اپنا راھبر و راھنما دل و جان سے تسلیم کرتے ھیں ۔ تبسم جاوید ملک جیسے انسان جن کا وجدان جاگ رھا ھو ھمارے معاشرے میں خال خال ہی نظر آتے ہیں ۔

 

 

ذوالفقار علی بھٹو کی پی پی کا زمانہ دیکھا ، مسلم لیگیوں کی حکومتیں اور مشرف و گیلانی کی شوخی طبع کی جولانیاں دیکھی جنہوں نے چہرے بدلے نظام کو سلامت رکھا اور سادہ پاکستانی قوم کے ساتھ ایسا ھی سلوک تادم حیات قائم رکھے ھوئے ھیں اور ایک دیانت دار رھنما عمران خان کی صورت میں قوم کو ملا ھے جس پر تنقید کی شدید الفاظ میں ژالہ باری ھو رھی ھے ۔

 

 

مگر وہ سرمو اپنے چٹانی عزم بالجزم میں کمزور نہیں ھوا اور ظالموں کے خلاف شمشیر بے نیام بن گیا ھے ۔ تبسم جاوید ملک اور آپ کے کویتی ساتھیوں نے پاکستان کے شہر گوجرانوالہ میں سماعت و گویائی سے محروم بچوں کی تعلیم اور ھنر سیکھنے کا عظیم الشان ادارہ قائم کیا ھے جس میں اس وقت تین سو سے زاھد بچے اور بچیاں معاشرے کی تشکیل میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں ۔

 

 

تبسم جاوید ملک ویلفئر ایسوسی ایشن گوجرانوالہ کے چیئرمین اور پاکستان تحریک انصاف کویت چیپٹر کے سینئر نائب صدر ھیں ۔ کویت میں مقیم ھر دلعزیز شخصیت سماجی سائنسدان جناب پیر امجد حسین کی قیادت میں پاکستان تحریک انصاف نے اسی فیصد سے زائد تارکین وطن کو عمران خان کی رھبری کا گرویدہ بنا دیا ھے ۔ پیر امجد حسین نے پوری دنیا میں پاکستان کی نیک نامی کی سفارت کے پرچم فضائے بسیط میں لہرا دیئے ھیں اور وہ عمران خان کی قیادت میں پاکستان کو پوری دنیا کی امامت کا شرف حاصل ھوتے دیکھنا چاھتے ھیں ۔

 

 

پیر مکرم جناب فضیلت مآب پیر امجد حسین ملکوتی تخیل ، بلند جذبوں اور سوز دروں کی دولت سے مالا مال ھیں ۔ اس وقت کویت سے آئے ھوئے تحریک انصاف کویت چیپٹر کے سینئر نائب صدر تبسم جاوید ملک وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کے لئے اسلام آباد پہنچ گئے ھیں اور وہ اپنے محبوب راھنما سے ملاقات میں کویت میں مقیم پاکستانیوں کے نیک جذبات پہنچانا چاھتے ھیں ۔

 

 

وزیراعظم عمران خان کو ایسے قیمتی کارکنوں کی پذیرائی کرنی چاھیئے ، بقول شاعر ۔۔ سرخی ء خار مغیلاں سے پتہ چلتا ھے ۔۔ تیرے دیوانے کہاں آئے اور کہاں تک پہنچے ۔۔ ھمارے قبیلے کے سردار مراد علی خاں کی یہ خوبی ھے وہ جہاں کہیں بھی کوئی گل رعنا مل جائے اس کی خوشبو سے پورے ماحول کو معطر کر دیتے ھیں ۔

 

 

 

جس طرح ابھی آپ نے خوشبودار شخصیت تبسم جاوید ملک کے نامور کارناموں کی صدائے بازگشت سنائی دی گئی ھے ، تبسم جاوید ملک کے انکسار میں سردار مراد علی خاں نے افتخار تلاش کیا ھے اور میں نے فضا میں پھیلتی ھوئی باتوں کو چرا لیا ھے اور تبسم جاوید ملک زیر لب گنگنا رھے ھیں بقول پروین شاکر ۔

 

 

 

فضا میں پھیل چلی میری بات کی خوشبو ۔۔ ابھی ھواؤں سے تو میں نے کچھ کہا ھی نہیں ۔قوت گویائی سے محروم اور سماعتوں کو فضیلت مآب جناب شہزاد بٹ کی آواز کو ترسے ہوئے تین سو زائد بچے اپنے ادارے کے لان سے لیکر آسماں کی نیلگوں وسعتوں تک اپنے مربی و محسن کی ارادت و عقیدت کے چراغوں کی روشنی کی لو میں راہ تک رھے ھیں اور وزیراعظم عمران خان کو بھی اپنے درمیان دیکھنا چاھتے اس کیفیت کو تبسم جاوید ملک ھی محسوس کر سکتے ھیں

 

 

 

اور وہ اپنے ملک کے وزیراعظم عمران خان کو کہہ سکتے ھیں کہ ۔ دیکھ تجھے کتنا چاھا ھے کبھی غور تو کر ۔ ایسے تو ھم کبھی اپنے بھی طلب گار نہ تھے ۔ گوجرانوالہ میں سماعت و گویائی سے محروم اس ادارے میں بچے اور بچیاں معاشرے میں ایک روشن چراغ کی آرزو کی جستجو میں ملک و ملت کی شاندار خدمات انجام دینے کی تمنا رکھتے ہیں ۔ جناب شہزاد بٹ اور قوت گویائی و سماعت سے محروم اس غیر معمولی مادر علمی پر مفصل چشم دید حیرت انگیز واقعات تاریخ کے رخ تاباں پر کہکشاں کی طرح روشن دکھائے جائیں گے ۔

 

 

 

سردار معظم سردار مراد علی خاں کا مکرر شکر گزار ہوں جنہوں نے نیکی کی آب جو میں اپنے حصے کا پانی ڈالنے کی دعوت دی ھے۔ اور شکوہ ء ظلمت شب کا کرنے والوں کو پیغام دیا ھے کہ تاریکی کو کوسنے کی بجائے تم بھی ننھا دیا روشن کر دو بقول فراز ۔۔ شکوہ ء ظلمت شب سے تو کہیں بہتر تھا ۔ کہ اپنے حصے کی کوئی شمع جلاتے جاتے ۔۔۔۔ آخر میں تبسم جاوید ملک کی کامرانیوں کے لیئے رفتار کن کی دعا دیتا ھوں ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.