علی ظفر کے ساتھ سیلفی لیتے ہوئے کچھ غیر آرام دہ محسوس کیاتھا

ہراسگی کا الزام لگانے والی خاتون کی گلوکارعلی ظفر سے معافی

0 10

گلوکار و اداکار علی ظفر پر جنسی ہراسگی کا بے بنیاد الزام لگانے والی فیشن بلاگر حمنہ رضا نے معذرت کرلی ہے۔ حمنہ نے معافی مانگتے ہوئے علی ظفر پر جھوٹا الزام لگانے کا اعتراف کیا اور کہا کہ الزام ایک غلط فہمی کی بنیاد پر لگایا۔

 

معافی نامے کی تصویر شیئر کرتے ہوئے حمنہ نے بتایا کہ 19 اپریل 2018ءکو میشا شفیع کے علی ظفر پر الزامات کے بعد انہوں نے بھی ان کی تائید میں ٹوئٹس کئے اور اداکار پر جھوٹے الزامات لگائے۔

 

حمنہ کا کہنا تھا کہ انہوں نے اپنے ٹوئٹس میں کہا تھا کہ بطور مداح میں نے علی ظفر کے ساتھ سیلفی لیتے ہوئے کچھ غیر آرام دہ محسوس کیا۔

 

 

 

اپنے اس ٹوئٹ کی وضاحت میں انہوں نے لکھا کہ اس وقت میں کچھ الجھاو کا شکار تھی اور غلط فہمی کی بنیاد پر میں نے وہ ٹوئٹ کیا،میری اس لاپرواہی نے اداکار کی ساکھ کو متاثر کیا، انہیں ذہنی پریشانی میں مبتلا کیا اور اہل خانہ کو بھی تکلیف پہنچی جس کے لیے میں تہہ دل سے معذرت خواہ ہوں۔

 

حمنہ رضا نے لکھا کہ آئندہ وہ سوشل میڈیا جیسے پلیٹ فارم پر غیر ذمہ داری کا مظاہرہ کرنے سے گریز کریں گی، پیغام کے آخر میں حمنہ نے علی ظفر کیلئے نیک خواہشات کا اظہار بھی کیا۔

 

علی ظفر نے حمنہ کے ٹوئٹ پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ پبلک پلیٹ فارم پر یوں برملا معافی مانگنا عام طور پر کمزوری کی علامت سمجھا جاتا ہے حالانکہ یہ باہمت اور خوبصورت لوگوں کا فعل ہے۔

 

گلوکار نے بھی حمنہ کیلئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ایف آئی اے نے گلوکار علی ظفر کے خلاف سوشل میڈیا پر چلائی جانے والی مبینہ مہم پر 9 ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا،ملزمان میں گلوکارہ میشا شفیع، حمنہ رضا سمیت 9 ملزمان شامل ہیں۔

 

سوشل میڈیا پر جہاں حمنہ کے معافی کے اس ٹویٹ کو سراہا جا رہا ہے وہاں صارفین کی طرف سے خوب تنقید کا نشانہ بھی بنایا جا رہا ہے کہ کسی پر الزام لگانے سے قبل سوچ اور سمجھ لینا چاہیے

 

کہ جو کام ہم کرنے جا رہے ہیں اس سے دوسرے بندے کو کس قدر تکلیف ہو گی اور اس کا ممکنہ نتیجہ کس صورت میں آ سکتا ہے۔

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.