بحرین میں بھارتی ڈاکٹر کی مجرمانہ غفلت ،جڑواں بچیوں کو مردہ قرار دے کر گھر بھیج دیا

دفنانے سے قبل زندگی کے آثار دیکھ کر انہیں واپس ہسپتال لے جایا گیا، مگر دیر ہو جانے کی وجہ سے دونوں وفات پا گئیں، بھارتی ڈاکٹر سمیت 3 ڈاکٹرز کوقید کی سزا ہو گئی

0 6

بحرین میں ایک بحرینی ڈاکٹر اور اس کی ساتھی بھارتی ڈاکٹر کی مجرمانہ غفلت نے جڑواں بچیوں کو زندہ درگور ہونے پر مجبور کر دیا۔ عدالت نے بحرینی ڈاکٹر کی شرمناک غیر ذمہ داری پر اسے تین سال قید کی سزا سُنا دی ہے اور اس کی دیگر دو معاونین کو بھی ایک، ایک سال کے لیے جیل بھیج دیا ہے جن میں سے ایک کا تعلق بھارت سے ہے۔
بحرین نیوز ایجنسی کے مطابق اس ڈاکٹر نے سنگین غفلت کا مظاہرہ کرتے ہوئے جڑواں بچیوں کو مردہ قرار دے کر والدین کو ہسپتال سے واپس بھیج دیا۔ جنہیں غم سے نڈھال والدین جب تدفین کے لیے قبرستان لے گئے تو ان میں زندگی کے آثار دیکھ کر حیران رہ گئے۔بدنصیب بچیوں کے والد نے عدالت کو بتایا کہ اس کی بچیوں کی پیدائش سلمانیہ میڈیکل کمپلیکس (SMC) میں ہوئی تھی۔
تاہم متعلقہ ڈاکٹر نے اسے بتایا کہ اس کی بچیاں پیدائش کے تھوڑی دیر بعد وفات پا چکی ہیں، اس لیے وہ انہیں لے جائے۔ تاہم قبرستان میں دفنانے سے قبل اسے ان بچیوں کے جسم میں حرکت محسوس ہوئی تو وہ فوری طور پر انہیں لے کر SMC پہنچ گیا اور ڈاکٹر کو بتایا کہ اس کی بچیاں زندہی ہیں۔ جب بچیوں کا دوبارہ چیک اپ کیا گیا تو پتا چلا کہ اس وقت ایک بچی زندہ تھی، جبکہ دوسری وفات پا چکی تھی۔
زندہ بچی کو فوری طور پر ریکوری روم میں منتقل کیا گیا جہاں وہ چند گھنٹوں بعد وفات پا گئی۔ بچیوں کے باپ کا کہنا تھا کہ اس ڈاکٹر کی مجرمانہ غفلت کی وجہ سے دونوں بچیوں کی جان گئی ہے، اگر انہیں مردہ قرار دے کر ہسپتال سے نہ بھیجا جاتا تو ان کی جان بچائی جا سکتی تھی۔ پبلک پراسیکیوشن کی جانب سے اس معاملے کی جانچ کے لیے نیشنل ہیلتھ ریگولیٹری اتھارٹی کو احکامات جاری کیے گئے۔
جس نے جڑواں بچیوں کی موت کے اسباب جاننے کے لیے ایک ٹیکنیکل کمیٹی تعینات کی۔ بچیوں کی فارنزک رپورٹ میں انکشاف ہوا کہ بچیاں قبل از وقت پیدا ہوئی تھیں اور انہیں تھوڑا تھوڑا سانس بھی آ رہا تھا۔ اگر انہیں ہسپتال کے آئی سی یو میں ہی رکھ کر دیکھ بھال کی جاتی تو ان کی زندگیاں بچائی جا سکتی تھیں۔ مگر اس ڈاکٹر کی سنگین لاپرواہی اور بچیوں کوغلط طور پر مردہ قرار دے کر واپس بھیج دینے سے ان کی موت یقینی ہو گئی۔
متعلقہ ڈاکٹر کو اس کی پیشہ ورانہ ذمہ داریاں نہ نبھانے پر سخت سزا دی جائے۔ عدالت نے فارنزک رپورٹ اور دیگر شواہد سامنے آنے کے بعد بھارتی ڈاکٹر کو تین سال کی سزا دی ہے اور اس کے معاون عملے کوبھی قصور وار ٹھہرا کر ایک، ایک سال کے لیے جیل بھیج دیا ہے۔ اس کے علاوہ ان پر ایک ، ایک ہزار بحرینی دینار کا جرمانہ بھی عائد کیا گیا ہے۔ اس مقدمے میں نامزد ایک نرس کو بے قصور ٹھہرا کر بری کر دیا گیا ہے۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.