کرونا وائرس اور اللہ تعالی پر توکل تحریر : محمد نثار ٹمن

اسطرح توکل عبادت بن جاتی ہے، اللہ تعالی کا حکم بھی یہی ہے کے انسان اللہ تعالی پر توکل کرئے۔ 

0 270
قوموں پر مشکل وقت آتا رہتا ہے اور وہی قومیں مشکل حالات اور بیماریوں سے نبردآزما اور جانبز ہوسکتی ہیں  جو علم و معرفت کا راستہ اختیار کرتی ہیں۔  مگر آج کے مادی دور میں دیکھا گیا ہے کے  انسان محض مخلوق کے گورکھ دھندوں میں پھنستا  اور دھنستا جارہا ہے۔ اور اپنے خالق و مالک سے تعلق کمزور سے کمزور تر کرتا جارہا ہے۔ مشکلوں میں،  آفات میں جہاں انسان  احتیاطی تدابیر کرتے ہوے اپنے آپکو بچانے کےلیے دربدر کی ٹھوکریں کھا کھا کر  کوشاں رہتا ہے وہاں  وہ ایسا دروازہ   کھٹکھانا  بھول جاتا ہے  جو کبھی بند ہی نہیں ہوتا ہے اور وہ دروازہ ہے اللہ تعالی پر توکل کا دروازہ، بھروسے کا دروازہ۔ 
یہاں پر ایک بات کرنا نہایت اہم ہے اور وہ ہے کہ اللہ تعالی پر توکل کرنے کا ہرگز مطلب یہ نہیں ہے کے اسباب کو پس پشت ڈال دیا جائے۔ یہ بات دین کے منافی ہے کے آپ اللہ تعالی پر توکل کریں لیکن اسباب کو  نہ اپنائیں۔ حدیث شریف سے اس بات کی  تائید اسطرح ہوتی ہے کہ ”   انس بن مالک رضی اللہ عنہ  نقل کرتے ہیں کے ایک صحابی نے حضور اکرم ص سے عرض کیا کے میں اپنی او نٹنی کو چھوڑ کر اللہ تعالی پر توکل کروں یا اسے باندھ کر ؟  جواب میں آپ صلی اللہ وسلم نے کہا کے اسے باندھ کر اللہ تعالی پر توکل کرو۔ 
 
اس حدیث سے ہم اس نتیجے پر پہنچتے ہیں کہ  ہم احتیاطی تدابیر اختیار کرتے ہوئے اللہ تعالی پر توکل کریں۔  یہی دین اور دین کی توجیہات ہیں ، یہ نہیں کیا جاسکتا کے بغیر احتیاطی تدابیر کے اللہ تعالی پر توکل و بھروسہ کیا جائے۔  
اللہ تعالی پر توکل کرنا یہ ایک ایسی حالت ہے جو چند حالتوں کا مجموعہ ہے۔ ابن القیم رحمتہ اللہ  نے مدارج السالکین کتاب میں نقل لیا ہے کہ  تو کل کا مطلب معبود کی صفات جاننا، اسباب  اختیار کرنا،  توحید پر ثابت  قدم ہونا ،  دل کا اللہ تعالی پر بھروسہ رکھنا اور اللہ تعالی سے خوش گمانی رکھنا۔ اللہ تعالی سورت الطلاق میں ارشاد فرماتے ہیں جسکا مفہوم ہے ” اللہ تعالی کافی ہے  اسکےلیے جو اللہ تعالی پر توکل کرتا ہے”  ۔ اسی طرح توکل کے اداب میں سے یہ بھی ہے کہ  بندہ اپنے آپ کو اللہ تعالی کے سپرد کردے، راضی،  برضا ہوجائے۔  
اسطرح توکل عبادت بن جاتی ہے، اللہ تعالی کا حکم بھی یہی ہے کے انسان اللہ تعالی پر توکل کرئے۔  قران پاک کے اندر بہت ساری آیات میں بار بار اللہ تعالی  اس طرف توجہ دلاتے ہیں کہ ، اللہ تعالی فرماتے ہیں ”  اگر تم مومن ہوتو اللہ تعالی پر توکل کرو”  ۔ اس طرح قرآن پاک میں سات مرتبہ کہا گیا کہ  ” مومن صرف اللہ پر ہی توکل کریں” ۔ ہم ہر نماز میں کہتے ہیں ، ترجمعہ ”  اے اللہ ہم تیری ہی عبادت کرتے ہیں اور تجھ ہی سے مدد مانگتے ہیں”  
موجودہ حالات میں جہاں ہم احتیاطی تدابیر اختیار کررہے ہیں،  وہی ہمیں اپنے معاشرے میں (توکل علی اللہ)   کی روش کو اپنانا چاہیے۔ اللہ تعالی سے قربت میں عافیت ہے۔ اگر ہم اللہ تعالی پر بھروسہ ہی نہیں کرسکتے تو ہمارے پاس بچتا ہی کیا ہے ؟   رسول اللہ ص سید المتوکلین  تھے وہی ہمارے اسواحسنہ ہیں۔ اللہ تبارک وتعالی قرآن پاک میں ارشاد فرماتے ہیں  (سورت توبہ۔  آیت نمبر  126 ) ترجمعہ  "منافقین پر ہر سال کوئی نہ کوئی مصیبت پڑتی رہتی تھی۔ کبھی ان کی خواہش اور منصوبوں کے خلاف مسلمانوں کو فتح نصیب ہوجاتی، کبھی ان میں سے کسی کا راز کھل جاتا، کبھی کوئی بیماری آجاتی، کبھی فقر و فاقہ میں مبتلا ہوجاتے۔ اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں کہ یہ مصیبتیں ان کو متنبہ کرنے کے لیے کافی ہونی چاہئے تھیں، لیکن یہ لوگ کوئی سبق نہیں لیتے”
اللہ تعالی نے صدیوں پہلے اپنی پاک کلام  میں واضع طور پر بتا دیا ہے کے منافقین پر ہر سال کوئی نہ کوئی مصیبت پڑتی رہتی ہے۔ اور اس کے مطابق اس سال کورونا کی صورت میں منافقین پر یہ مصیبت پڑئی ہوئی ہے۔  لیکن ساتھ ہی ساتھ  اللہ  تعالی نے مسلمانوں کےلیے یہ بشارت بھی دی ہے کے ہمیشہ مسلمانوں کو ان منافقین پر فتح نصیب ہو گی۔ مسلمانوں پر اللہ تعالی نے آج بھی منافقین کے سارے راز کھول دیے ہیں۔ اس بار بھی انشاء اللہ تعالی فتح مسلمانوں کی ہی ہوگی،  کیونکہ اللہ تعالی کی پاک کتاب نے آج سے کئی صدیاں پہلے ہمیں بتا دیا تھا۔ 
اسلیے اللہ تعالی کی ذات پر پختہ یقین رکھیں اور کثرت سے استعفار کریں اور اللہ تعالی پر توکل رکھیں۔ انشاء اللہ جلد ہی کورونا اللہ تعالی کے حکم سے فنا ہوجاے گا اور ایک بار پھر منافقین اپنی سازش اور ناپاک ارادوں میں ناکام ہونگے۔اللہ تعالی سے دعا ہے کہ ہم جلد ہی اس مصیبت سے باہر نکلیں  اور بحیثیت قوم ہم  عالمی بساط پر کام کرنے کے قابل ہوں، اسباب اختیار کریں اور اللہ تعالی پر بھروسہ کرتے ہوئے آگے بڑھیں۔  اللہ تعالی ہم سب کا حامی و ناصر
ہو اور پاکستان کی حفاظت فرمائے۔  آمین۔
citytv.pk
citytv.pk

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.