ایک کالم پنجاب پولیس کے نام ، تحریر : عمر فاروق ناز

معاشرے وہی ترقی پزیر ہوتے ہیں جہاں پر قانون اور انصاف کی حکمرانی ہو

0 49

جہاں سے جرائم کی حد شروع ہوتی ہے وہاں پر قانون کی حکمرانی بھی موجود ہوتی ہے ، جرم چاہے کتنا بھی چھپ کر ہو قانون کی نظروں سے نہیں بچ سکتا ، معاشرے وہی ترقی پزیر ہوتے ہیں جہاں پر قانون اور انصاف کی حکمرانی ہو قانون ہمیشہ رنگ نسل اور زبان سے بالا تر ہوتا ہے اور جہاں پر قانون رنگ نسل اور زبان سے بالا تر ہو وہاں کا معاشرہ بھی مثالی ہوگا ، قانون کو ہمیشہ آزادانہ طور پر کام کرنے دیا جائے تاکہ انصاف کی راہ میں کوئی رکاوٹ حائل نہ ہوسکے ،

 

آج کا یہ میرا کالم پنجاب پولیس کے نام کرتا ہوں پنجاب میں دوسرے صوبوں کی نسبت جرائم کی شرح کافی بہتر ہے اور اس بہتری میں یقینا قانون کی حکمرانی اور آفیسران کا چناؤ اور تقری بھی شامل ہے آج اگر ہم اپنے گھروں میں آرام کی نیند سوتے ہیں وہاں پر پنجاب پولیس کا ایک اہم رول شامل ہے ، میری حکمرانوں سے اپیل ہے کہ سیاست اور قانون کو اپنے اپنے دائرہ کار میں رہ کر کام کرنا چاہیے تاکہ آزادانہ اور منصفانہ طور پر ہر کسی کو انصاف میسر ہو اور یقیناً وہ قومیں تاریخ میں ہمیشہ زندہ جاوید رہتی ہیں جہاں پر صرف قانون کی پاسداری ہو اور ہر کسی کو انصاف اس کی دہلیز پر میسر آئے ۔

 

یہاں پر میں گوجرانولہ ڈویژن کا خصوصی تزکرہ کروں گا جہاں کی سرزمین نے پولیس کے شعبہ میں بہتری افسران پیدا کیے اور انہوں نے پوری دنیا میں ایک نام کمایا ۔ سابق ڈی آئی جی گوجرنوالہ زولفقار علی چیمہ وزیر آباد کی سرزمین کا ایک خوبصورت ستارہ ہے جس نے اپنی عمدہ کارکردگی کی بدولت پنجاب بھر میں ایک نام کمایا ہے اور اپنی تعیناتی کے دوران جرائم کی شرح کو کسی حد تک ختم کیا اور لوگوں کے دلوں پر آج بھی راج کرتے ہیں ان کا بھتہ خوروں اور اغواء کاروں کے گروہوں کا ختم کرنے میں ایک بڑا کردار شامل تھا ۔

 

سابق آرپی گوجرانولہ سلطان اعظم تیموری بھی اپنی نیک نامی اور اپنے کام کی وجہ سے ایک نام رکھتے ہیں ان کی شرافت اور محنت بھی کسی سے ڈھکی چھپی نہیں اور آج بھی ماشاءاللہ انٹرنیشنل لیول پر یو این او کی نمائندگی کر رہے ہیں ۔ سابق آر پی او گوجرانولہ طارق عباس قریشی کے نام سے بھی ہر کوئی واقف ہے انہوں نے گوجرانولہ میں اپنی تعیناتی کے دوران اپنے شعبے میں مکمل انصاف کیا اور دور جدید کے مطابق انصاف کی فراہمی کے لیے لوگوں کی سہولت کے لیے ایپلی کیشنز بھی متعارف کروائیں تاکہ عوام کو ان کی دہلیز پر انصاف میسر ہو اور محکمانہ پرموشن کو بھی نیچلے طبقہ کے ملازمین کے ترقی کے لیے اقدامات کیے ۔

 

موجودہ آر پی گوجرانولہ ریاض نزیر گھاڑا بھی ایک مدبر انسان ہیں لوگوں اور سائل کے ساتھ بڑی خندہ پیشانی سے ملتے ہیں اور موقع پر اس کی داد رسی کے لیے اقدامات کرتے ہیں ایسے پولیس افسران محکمہ کےلئے ہمیشہ فخر کا باعث ہوتے ہیں ۔ موجودہ سی پی او گوجرانولہ گوہر مشتاق بھٹہ کا نام بھی کسی سے مخفی نہیں ہے اپنی تعیناتی کے دوران سائل کے ساتھ شفقت اور محبت سے پیش آتے ہیں اپنے ملازمین سے بھی پورا رابطہ رکھتے ہیں محکمہ کو ان پر ہمیشہ فخر رہے گا ۔

 

موجودہ ایس ایس پی انویسٹیگیشن عبدالقیوم گوندل کا نام بھی کسی تعارف کا محتاج نہیں جنہوں نے مختصر عرصہ میں اپنی قابلیت کی بنا پر محکمانہ ترقی کی اور اپنے کام کی بدولت لوگوں کے مسائل کے حل کے لیے ہمیشہ مصروف عمل رہے ان کا عوام پولیس تعاون کمیٹیوں میں بھی ایک اہم رول شامل ہے ۔ موجودہ ڈی ایس پی سی آئی اے گوجرانولہ عمران عباس چدھڑ ایک دھبنگ افسر کے طور پر ابھرے ہیں جنہوں نے مختصر عرصہ میں نہ صرف جرائم پیشہ لوگوں کو نکیل ڈالی بلکہ ملیشیا سے بدنام زمانہ لقمان ہلاکو کو اپنی ٹیم کے ہمراہ گرفتار کرکے اسے کیفرِ کردار تک پہنچایا محکمہ کو ان پر ہمیشہ فخر رہے گا ۔ قانون کی حکمرانی ہی دراصل بہترین قوموں کا شیوہ ہوتی ہے وہ قومیں ہمیشہ تاریخ میں زندہ رہتی ہیں جہاں پر لوگوں کو مکمل انصاف میسر ہو اللہ تعالیٰ میرے ملک پاکستان کو قیامت کی دیواروں تک قائم و دائم رکھے آمین

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.