فیس بک، ٹوئٹر سمیت دیگرسوشل میڈیا کمپنیوں پر لاکھوں ڈالر جرمانہ

سبھی سماجی کمپنیاں قانون کے مطابق ملک میں اپنا نمائندہ تعینات کریں

0 6

پاکستان میں سوشل سائٹس کا اکثر ایشو بنا رہتا ہے۔حکومت پاکستان نے بھی سوشل میڈیا کے حوالے سے سبھی ٹیک کمپنیز کو اسلام آباد میں دفاتر کھولنے کی ہدایت کی تھی۔

اب یہی حال ترکی کا ہے کہ ترکی نے بھی سبھی سوشل میڈیا سائٹس کو ہدایت کی تھی کہ وہ ملک میں اپنا نمائندہ رکھیں لیکن جب کمپنیوں کی طرف سے کوئی عمل درآمد نہیں ہوا تو پھر قانون حرکت میں آ گیا۔

ترکی نے نئے سوشل میڈیا قانون کی عدم تعمیل پر فیس بک، ٹوئٹر، یوٹیوب اور انسٹاگرام سمیت متعدد سوشل میڈیا کمپنیوں پر 12، 12 لاکھ ڈالر کا جرمانہ عائد کردیا۔ ترکی میں گزشتہ ماہ سے نافذ ہونے والے نئے قانون کے تحت یومیہ 10 لاکھ سے زیادہ صارفین کے حامل سوشل میڈیا کمپنی کے لیے ضروری ہوگا کہ وہ اپنا ایک نمائندہ مقرر کریں جو ترک عدالتوں میں کمپنی کی جانب سے جوابدہ ہوں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق قانون کے تحت سوشل میڈیا کمپنی کا نمائندہ 48 گھنٹوں کے اندر اندر ‘متنازع’ مواد کو ہٹانے اور ترکی کے اندر صارف کے ڈیٹا کو محفوظ بنانے سے متعلق احکامات کی پاسداری کو یقینی بنانے کا پابند ہوگا۔

ناقدین کا کہنا ہے کہ حکومت مرکزی دھارے کے ذرائع ابلاغ پر اپنی گرفت سخت کرنے کے بعد آن لائن پلیٹ فارمز کا سہارا لے کر اختلاف رائے کو ختم کرنا چاہتی ہے۔

ترکی کے نائب ٹرانسپورٹ اور انفرااسٹرکچر وزیر اور انفارمیشن اینڈ کمیونیکیشن ٹیکنالوجیز اتھارٹی کے چیئرمین عمر فاتح نے ٹوئٹر پر بتایا کہ فیس بک، انسٹاگرام، ٹوئٹر، پیرسکوپ، یوٹیوب اور ٹک ٹاک پر جرمانہ عائد کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ترکی میں کام کرنے والی غیر ملکی سوشل میڈیا کمپنیوں کو قواعد کے بارے میں بتایا گیا ہے جن کی تعمیل ضروری ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مزید عدم تعمیل کی صورت میں 34 لاکھ ڈالر جرمانہ، اشتہار پر پابندی اور 5 ماہ کے اندر اندر 50 فیصد بینڈوتھ میں کمی ہوگی۔عمر فاتح نے کہا

کہ وہ کمپنیاں جو اب بھی قانون کی پاسداری نہیں کرتی ہیں ان کی بینڈوتھ میں 90 فیصد کمی ہوگی۔انہوں نے کہا کہ اگر کمپنیاں قانون کی تعمیل کرتی ہیں تو پابندیاں ختم کردی جائیں گی اور عائد جرمانے کا ایک چوتھائی حصہ وصول کیا جائے گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.