"بند مٹھی سے پھسلتی ریت” تحریر: محمد طیب نوید

"Slippery sand with closed fists" Written by Muhammad Tayyab Naveed

0 7

دھندلی شام کے ساۓ گہرے ہو رہے تھے۔۔۔۔!!

مزید گہرے۔۔۔۔۔

ہر طرف تاریکی کا سماں تھا۔۔۔۔۔

سردی کی شدت میں اضافہ ہوتا جا رہا تھا

سب چرند پرند بھی اپنے اپنے ٹھکانوں کو لوٹ گئے تھے۔۔۔۔۔۔

کسی ذی روح کا نام و نشان بھی نہیں تھا۔۔۔۔۔

اس قدر شدید ٹھنڈ میں لوگ اپنے گھروں کے گرم کمروں میں اور لحافوں میں دبکے بیٹھے تھے۔۔۔۔۔۔

لیکن کسی پارک کے ایک نسبتاََ تاریک گوشے میں ٹھنڈے سنگی بنچ پہ سر جھکاۓ بیٹھا ایک شخص ہر احساس سے عاری محسوس ہوتا تھا۔۔۔۔۔۔۔

نا اسے سردی کی شدت محسوس ہوتی تھی اور نا اسے تیزی سے گزرتی رات کی پرواہ تھی۔۔۔۔

وہ نجانے کس دنیا کا باسی تھا…..

اس نے سر اوپر اٹھایا اور قریب ہی سفید موتیے کے جھنڈ پہ نظر پڑی۔۔۔انہیں دیکھتے ہوئے ایک بار پھر وہ اسی دنیا میں چلا گیا جہاں سے ابھی ابھی لوٹا تھا۔۔۔۔۔

"آپ کو پتہ ہے صائم۔۔؟

مجھے موتیا کے پھول کتنے اچھے لگتے ہیں۔۔۔!!!”

چہکتی ہوئی آواز اسکے کانوں سے ٹکرائی۔۔۔۔۔

صائم نے مسکراتے ہوئے اسکے چہرے پہ پھیلی معصومیت دیکھی تھی۔۔۔۔۔

"اور اسکی خوشبو تو مجھے پاگل سا کر دیتی ہے۔۔۔۔
” ایمان موتیا کے جھنڈ سے پھول توڑتے ہوئے خود بھی موتیا کا پھول ہی لگ رہی تھی۔

بے اختیار صائم کے دل میں اسے تنگ کرنے کی خواہش جاگی۔۔۔۔۔۔

"تو پہلے کونسا سیانی ہو تم مانو۔۔۔؟”

صائم اسے پیار سے مانو بلاتا تھا۔۔۔۔

ایمان اسکی طرف پلٹی اور غصے سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔

صائم کے چہرے پہ پھیلی شرارتی سی مسکراہٹ دیکھ کے ایمان غصے سے اسکی طرف لپکی۔۔۔

"صائم کے بچے ٹہرو تمہیں ابھی بتاتی ہوں۔۔۔۔”

"کہاں ہیں میرے بچے۔۔۔؟”

صائم نے معصومیت سے پوچھا…!

پھر کیا تھا صائم آگے اور ایمان اسکے پیچھے۔۔۔۔

اس نے بے اختیار اس طرف دیکھا جہاں کبھی وہ دونوں تھے۔۔۔۔۔اور ایک بار پھر یادوں کے گہرے جنگل سے نکلنے کی کوشش کی تھی۔۔۔۔۔

آج سب کچھ وہیں تھا وہی پارک وہی موتیے کا جھنڈ اور وہ خود۔۔۔۔!!

لیکن وہ کہیں بھی نہیں تھی۔۔۔۔۔

ہاں وہ اسے چھوڑ کے جا چکی تھی۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

 

 

”ایمان“ صائم کی تایا زاد کزن تھی۔۔۔۔۔

اسے بچپن سے ہی گڑیا جیسی ایمان بہت پیاری لگتی تھی۔۔۔۔۔

لیکن وہ صرف اسے پارک میں ہی دیکھ پاتا تھا کیونکہ تائی جان اور انکے درمیان تعلقات بہت سرد قسم کے تھے۔۔۔۔۔۔

صائم کے بابا کے انتقال کے بعد تو تایا جان نے ان سے آنکھیں ہی پھیر لیں تھیں۔۔۔۔۔۔

”صائم“ ایمان سے اکثر سکول ملنے جاتا تھا۔۔۔۔۔

اور پارک تو وہ روز ہی جاتی واک کرنے پھر صائم بھی روز وہیں پہنچ جاتا۔۔۔۔۔۔

دونوں کے دلوں میں محبت نے ڈیرے جما لئے۔۔۔۔۔

اور ایک ڈر بھی تھا جو دونوں کے ہی دلوں میں تھا۔۔۔۔۔۔

ایسی ہی ایک شام صائم نے اپنے دل کی بات ایمان سے کر ہی دی۔۔۔۔

"مانو اگر زندگی کے کسی بھی موڑ پہ تم کبھی مجھ سے دور ہوئی تو میں جی نہیں پاؤں گا شاید۔۔۔۔”

اسکی بات پہ ایمان پہلے تو بہت ہنسی لیکن اسے بے انتہا سریس دیکھ کے اسکی ہنسی کو بریک سی لگی تھی۔۔۔۔۔

"ایسے کیوں بول رہے آپ۔؟”

"تمہیں پتہ تو ہے جب سے ابو گئے ہمارے گھر کے معاشی حالات کچھ ٹھیک نہیں ہیں اور اسی وجہ سے سب ہم سے دور ہو گئے

ہیں اور خاص طور پہ تائی امی۔۔۔۔”

صائم نظریں جھکاتے ہوئے آہستہ آواز میں بولا۔۔۔۔۔۔

"مجھے بھی بہت ڈر لگتا ہے آپ سے دور جانے کا سوچ کے بھی۔۔۔۔۔”

ایمان آنکھیں میچتے ہوۓ بولی۔۔۔۔۔۔

صائم نے لمبی سی سانس لی اور مانو کی طرف دیکھتے ہوۓ بولا۔۔۔۔

"مجھے یونیورسٹی کی طرف سے اسکالر شپ ملا ہے اور میں باہر جا رہا ہوں۔۔۔۔!

میرے آنے تک انتظار کرو گی میرا..؟”

وہ سراپا سوال تھا جیسے۔۔۔۔

"ہاں میں ساری زندگی آپکا انتظار کروں گی۔۔۔۔۔”

ایمان نے بے ساختہ صائم کا تھاما ہوا ہاتھ سیدھا کیا اور اسکی ہتھیلی پہ اپنے نازک ہونٹ رکھ دیے اور وہ اکثر ہی ایسا کرتی تھی۔۔۔۔۔۔۔

صائم کے دل کو کچھ ہوا۔۔۔۔۔۔

"سیدھے ہاتھ پہ کیوں بوسہ دیا مانو۔۔؟”

صائم کے سوال پہ ایمان کی آنکھیں بھیگ گئیں اور مسکراتے ہونٹوں سے اس نے جو بات کی اسے سن کے صائم سراپا حیرت بن گیا۔۔۔۔۔۔

"مجھے پیار سا آتا ہے آپکے ہاتھوں کی ان لکیروں پہ جو میرے دل تک آتیں ہیں اور میں ہی انکا مقدر ہوں۔۔۔۔۔۔۔”

وہ اپنی مومی انگلیاں صائم کے ہاتھوں کی لکیروں پہ پھیرتے ہوئے بہت یقین سے بولی تھی۔۔۔۔۔۔۔

اسکی اتنی محبت پہ صائم کا دل سرشار سا ہو گیا اور وہ خوشی خوشی اپنے جانے کی تیاریاں کرنے لگا۔۔۔۔۔۔

جاتے سمے اس نے اپنی ماں سے کہا تھا۔۔۔۔

"امی آپکو پتہ ہے نا ”مانو“ میں میری جان ہے۔۔۔۔”

"ہاں میری جان مجھے پتہ ہے۔۔۔۔۔”

عدیلہ بیگم نے اسکے ماتھے پہ بوسہ دیا تھا۔۔۔۔

"تو میری جان کی حفاظت کیجئے گا امی۔۔۔وہ صرف میری ہے۔۔۔۔۔”

"ہاں بیٹا خوشی خوشی جاؤ تم فکر نا کرو میں کرتی ہوں تمہارے تایا ابو سے بات۔۔۔۔۔۔۔”

عدیلہ بیگم کی تسلی پہ وہ مطمین ہوتا وہاں سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

 

 

صائم کے جانے کے کچھ عرصے بعد ہی ایمان کا رشتہ اسکی ماں نے اپنے بھانجے سے کر دیا

جب ایمان کو اس بات کا پتہ چلا تو وہ فوراََ عدیلہ بیگم کے پاس آئی اور روتے ہوئے ساری بات بتا دی۔۔۔۔۔

عدیلہ بیگم اسی ٹائم وہاں گئی اور صائم کے تایا کی بہت منت سماجت کی۔۔۔۔۔۔

"بھائی صاحب خدا کیلئے یہ ظلم نا کریں

میرا بیٹا مر جاۓ گا۔۔۔۔۔۔۔”

عدیلہ بیگم روتے ہوئے گویا ہوئیں۔۔۔۔

"ایسا کیا ہے آپکے بیٹے میں کہ میں اپنی پھول جیسی بیٹی اسکے حوالے کر دوں۔۔؟

اور میری بیٹی لاڈوں اور آسائشات میں پلی بڑھی ہے آپکا بیٹا اسکی ایک دن کی شاپنگ کا خرچ بھی نہیں اٹھا سکتا۔۔۔۔۔”

"بہن برا نا منانا یہ سچ ہے لیکن بہت کڑوا ہے….!!!!”

تائی امی نے مسکراتے ہوئے زہر اگلا تھا۔۔۔۔۔۔

"جا سکتے ہو آپ لوگ….

دوبارہ یہاں آنے کی ضرورت نہیں آپ لوگوں کو۔۔۔۔۔۔

رشتے ہمیشہ برابر کے لوگوں میں ہی کئے جاتے ہیں۔۔۔۔۔

میرا بھانجا ماشاء اللہ بہت بڑا انجینئر ہے وہ بہت خوش رکھے گا میری بیٹی کو۔۔۔۔۔۔۔۔

اگلے ماہ ہم شادی بھی کر رہے دونوں کی۔اللہ نظر بد سے بچاۓ میرے بچوں کو۔۔۔۔۔۔۔”

عدیلہ بیگم روتے ہوئے گھر واپس آ گئیں اور اگلے ماہ واقعی ایمان کی شادی ہو گئی اور وہ کچھ بھی نا کر پائیں۔۔۔۔۔۔۔

صائم اس دن بہت بے چین تھا

گھر کال کی تو عدیلہ بیگم نے اسے سب بتا دیا کچھ بھی نا چھپایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ سکتے کی کیفیت میں تھا۔۔۔۔۔

جس بات کا ڈر تھا وہ ہو چکی تھی

اسے دولت کی خاطر ٹھکرا دیا گیا تھا

اسکی بے لوس محبت پہ ایک انجینئر کی دولت کو فوقیت دی گئی تھی۔۔۔۔۔

اس رات اس نے ایک عہد کیا تھا خود سے کہ جب تک کچھ بن نہیں جاتا پاکستان کی سر زمین پہ قدم بھی نہیں رکھے گا۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

 

 

 

وقت ہمیشہ ایک سا نہیں رہتا۔۔۔۔!!!

دس سال بعد صائم جب پاکستان لوٹا تو واقعی وہ کچھ بن کے ہی آیا تھا۔۔۔۔۔

تائی امی کا بھانجا فقط انجینئر تھا اور وہ پوری کنسلٹنگ کمپنی کا مالک بن چکا تھا۔۔۔۔۔۔

جب محبت تھی تو دولت نہیں تھی۔۔۔۔

اور اب دولت تھی تو محبت نہیں تھی۔۔۔۔

وہ روز شام کو اسی پارک میں آتا اور اپنی محبت کو چلتے پھرتے سانسیں لیتے دیکھتا….

مانو کے ساتھ گزرے ہوئے لمحے کسی آسیب کی طرح اسکے ساتھ چمٹے ہوئے تھے۔۔۔۔

اس نے ایک سانس ہوا کے سپرد کی اور اٹھ کر گھر کے راستے پہ چل دیا۔۔۔۔۔

”بہت عجیب سا تھا وہ بھی۔۔۔!!

تھیں خواہشیں بھی عجیب اسکی۔۔۔۔

اکثر اوقات جب مل بیٹھا کرتے تھے ہم۔۔۔

ہاتھ میرا وہ پکڑ لیتا۔۔۔۔!!

پہلے تو اک نظر بھر کے دیکھتا اسکو۔۔!!

پھر بے ساختہ بوسہ لے لیتا۔۔۔۔

الٹے نہیں۔۔۔ہاں سیدھے ہاتھ کا۔۔!!

میں بھی حیرت میں گم۔۔۔۔کبھی جو وجہ پوچھتا اس سے۔۔۔۔

تو مسکر کر گلاب سی خوشبو بکھیر دیتا۔۔۔

اصرار تھا جب مزید بڑھنے لگا۔۔۔وہ بھی پریشان تھا راز کھلنے لگا۔۔۔۔

نظریں جھکا کے کہنے لگا مجھ سے

کیوں نا بوسہ لوں میں ان لکیروں کا۔۔۔۔

کہ جاتیں ہیں جو میرے دل تک۔۔۔۔۔

بہت یقین تھا کہ وہی میرا بخت ہے۔۔

مگر الٹی بساط مقدر نے۔۔۔۔

سب پلٹ کر رکھ دیا اس نے۔۔۔۔

نجانے کس خوش نصیب کا۔۔۔۔۔

چومتا وہ ہاتھ ہو گا۔۔۔

مجھے تو محبت تھی۔۔۔۔

اسکی اداء دلربا سے۔۔۔۔

اب فقط میری سوچ ہے وہ۔۔۔۔۔!!!!!

 

 

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.