ڈالر مزید گرے گا ، جلد 155 روپے پر آنے کی پیش گوئی

حکومت کے سخت ترین اقدامات کی وجہ سے ملک میں حوالہ اور ہنڈی کا کاروبار ختم ہوگیا ، بیرونی ممالک سےقانونی ذرائع استعمال کرتے ہوئے ترسیلات زر کی آمد میں اضافہ ہوچکا ہے ، پچھلے 4 ماہ سے ماہانہ بنیادوں پر پاکستان میں ترسیلات زر کی آمد 2 ارب ڈالر سے تجاوز کرچکی ہے ، صدر فاریکس ایسوسی ایشن ملک بوستان خان

0 17

گزشتہ کئی روز سے پاکستانی روپے کی قدر میں اضافے کے پیش نظرجلد امریکی ڈالر کی قیمت 155 روپے کی کم ترین سطح پر آنے کی پیش گوئی کردی گئی۔

کرنسی ایکس چینج کمپنیز ایسوسی ایشن آف پاکستان کے صدر ملک محمد بوستان خان کا کہنا ہے

کہ ایف اے ٹی ایف کی مطلوبہ شرائط پوری کرنے کے لیے حکومت پاکستان کے سخت ترین اقدامات کی وجہ سے ملک میں حوالہ اور ہنڈی کا کاروبار ختم ہوگیا ،

جس کے نتیجے میں بیرونی ممالک سے قانونی ذرائع استعمال کرتے ہوئے ترسیلات زر کی آمد میں اضافہ ہوچکا ہے ،

اس کے باعث پچھلے 4 ماہ سے ماہانہ بنیادوں پر پاکستان میں ترسیلات زر کی آمد 2 ارب ڈالر سے تجاوز کرچکی ہے ،

اس کے علاوہ مقامی مارکیٹوں میں ڈالر کی طلب کے مقابلے میں رسد بھی بڑھ چکی ہے جو ڈالر کی قدر میں ہونے والی کمی کی بڑی وجہ ہے۔

صدر فاریکس ایسوسی کے مطابق حکومت کی طرف سے شروع کیے گئے روشن ڈیجیٹل پاکستان اکاونٹ کے ذریعے بڑے پیمانے پر پاکستانی ملک میں پیسے بھیج رہے ہیں ،

جہاں پہلے ایک ہفتے میں 100 ملین یومیہ پاکستان آرہے تھے جو کہ اب بڑھ کر 300 ملین روپے ہوچکے ہیں ،

اس کے علاوہ روشن ڈیجٹل کے اعلان کے بعد بڑے پیمانے پر لوگ ڈالر فروخت کر رہے ہیں لیکن خریداری بہت کم ہو گئی ہے ،

اس کے ساتھ ساتھ منی ایکسچینج کاونٹر پر یومیہ 10 سے 12 ملین ڈالر فروخت کے لیے ہیں جو حکومت پاکستان کو دیے جا رہے ہیں

جب کہ پاکستان کی معیشت اور کرنٹ اکاونٹ خسارے میں بہتری کی وجہ سے بھی ڈالر کی قدر میں کمی کا سلسلہ جاری ہے ۔

بتایا گیا ہے کہ گزشتہ ہفتے کے دوران درآمدی ایل سیز کھلنے کے باوجود ڈالر کی قدر میں کمی واقع ہوئی ،

جہاں کاروبار کے دوران انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر 1 روپے 16پیسے مزید کم ہوکر 159 روپے 09 پیسے پر بند ہوئی ،

دوسری طرف اوپن مارکیٹ میں بھی ڈالر کی قدر 1 روپے 10 پیسے کی کمی سے 159.30 روپے پر بند ہوئی۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.